npodu

Sad Judai Ghazal Haqeeqat Jan ker aisi hamaqat kon kerta hey

haqeqat jan ker aisi hamaqat kon kerta hey bhala bey faiz logo sey muhabbat kon kerta hey btao jis ujrt mein khsara e khsara ho bina sochy khsary ki tijarat kon kerta hey hamen hi ghalat fehmi thi kisi key wasty warna. zamaney k riwajon sey baghawat kon kerta hey khuda ney sabar kerny ki mujhy tofeeq bakhshi hey ary jee bhar k tarpao shikayat kon kerta hey. kisi k dil k zakhmo per marham rakhna zaruri hey magr is dor mein yeh zehmat kon kerta hey.

حقیقت جان کر ایسی حماقت کون کرتا ہے
بھلا بے فیض لوگوں سے محبت کون کرتا ہے

بتائو جس اجرت میں خسارا ہی خسارا ہو
بنا سوچےخسارے کی تجارت کون کرتا ہے

ہمیں ہی غلط فہمی تھی کسی کے واسطے ورنہ
زمانے کے رواجوں سے بغاوت کون کرتا ہے

خدا نے صبر کرنے کی مجھے توفیق بخشی ہے
ارے جی بھر کے تڑپائو شکایت کون کرتا ہے

کسی کے دل کے زخموں پر مرحم رکھنا ضروری ہے
مگر اس دور میں یہ زحمت کون کرتا ہے

Akmal Ameer Gohar

Add comment

Your Header Sidebar area is currently empty. Hurry up and add some widgets.