npodu

Muhabbat Ki Nagri | Urdu Ghazal by Mustafa Kamaal

Aey Muhabbat ki nagri men aany ki khwahish liey dar badar phirny walo suno,
Hum ko har waqt hansny ki aadat thi bilkul tumhari tarha,
neend aankhon mein aisy thi k jesy hi bistar pey aa ker giren; to hamen khawb aany lagen,
ungaliyan barha eik message ko likhny mitany sey bilkul bhi waqif nahi thi,
aik chehry ko takny ki hasrat liey bain kerti hui aankh dekhi nahi thi,
kan makhsus aawaz sunny ki khatir tarasny k bilkul bhi aadi nahi thy,
phir hamen eik din aik haseena ki aankhon ka darshan hua, neend looti gai,
khawb jaty rahy, us hansi key iwaz hamko tawaan men siskian di gaen,
zingadi raat dhalty kisi tar per tanha bethy kabutar ki manid hui,
hath apni muhabbat key alfaz likhty huey kapkapany lagy,
jis ka mery bina aik pal na guzarta tha ab; saal hony ko hey,
Aey Muhabbat ki nagri men aany ki khwahish liey dar badar phirny walo suno,
gar abhi bhi muhabbat ki khwahish hey phir ek naseehat suno,
aik hanso ka jora khareedo; unhen tum elehda karo,
eik mar jany per eik bach jaey to phir ijazat hey tum ko key tum bhi muhabbat karo

اے محبت کی نگری میں آنے کی خواہش لئے دربدر پھرنے والو سنو
ہم کو ہر وقت ہنسنے کی عادت تھی بالکل تمہاری طرح
نیند آنکھوں میں یوں تھی کہ جیسے ہی بستر پہ آ کر گریں تو ہمیں خواب آنے لگیں
انگلیاں بارہا ایک میسج کو لکھنے مٹانے سے بالکل بھی واقف نہیں تھیں
ایک چہرے کو تکنے کی حسرت لئے بین کرتی ہوئی آنکھ دیکھی نہیں تھی
کان مخصوص آواز سننے کی خاطر ترسنے کے بالکل بھی عادی نہ تھے
پھر ہمیں ایک دن اک حسینہ کی آنکھوں کا درشن ہوا
نیند لوٹی گئی ؛ خواب جاتے رہے
اُس ہنسی کے عوض ہم کو تاوان میں سسکیاں دی گئیں
زندگی رات ڈھلتے کسی تار پر تنہا بیٹھے کبوتر کے مانند ہوئی
ہاتھ اپنے محبت کے الفاظ لکھتے ہوئے کپکپانے لگے
جس کا میرے بنا ایک پل نہ گزرتا تھا اب سال ہونے کو ہے
اے محبت کی نگری میں آنے کی خواہش لیے دربدر پھرنے والو سنو
گر ابھی بھی محبت کی خواہش ہے پھر اک نصیحت سنو
ایک ہنسوں کا جوڑا خریدو انہیں تم علیحدہ کرو
ایک مرنے پہ گر ایک بچ جائے تو پھر اجازت ہے تم کو کہ تم بھی محبت کرو

More Relevant Topics on npodu:

Love Urdu Poetry/ Ghazals by Mustafa Kamal Vol 1

Akmal Ameer Gohar

1 comment

Your Header Sidebar area is currently empty. Hurry up and add some widgets.